Bismillah ki Taseer


بسم اللہ کي تاثير

بادشاہ روم قيصر نے حضرت عمر فاروق رضي اللہ عنہہ کي طرف ايک خط ميں لکھا کہ ميرے سر ميں درد رہتا ہے، کوئي علاج بتائيں۔
حضرت عمر رضي اللہ عنہہ نے اس کے پاس ٹوپي بھيجي کہ اسے سر پر رکھا کرو، سر کا درد جاتا رہے گا۔
چناچہ قيصر جب وہ ٹوپي سر پر رکھتا تو درد ختم ہوجاتا اور جب اتارتا تو درد دوبارہ لوٹ آتا۔
اسے بڑا تعجب ہوا، تجسس سے ٹوپي چيري تو اس کے اندر ايک رقعہ پايا جس پر بسم اللہ الرحمٰن الرحيم تحرير تھا۔
يہ بات قيصر روم کے بادشاہ کے دل ميں گھر کر گئي، کہنے لگا دين اسلام کس قدر معزز ہے اس کي تو ايک آيت بھي باعث شفا ہے، پورا دين باعث نجات کيون نہ ہوگا اور اسلام قبول کرليا۔
ايک مرتبہ حضرت عيسي عليہ السلام کا گذر ايک قبر پر ہوا جس مين ميت کو عذاب ديا جارہا تھا، دوبارہ وہاں سے گذر ہوا تو ديکھا کہ قبر ميں رحمت کے فرشتے ہيں ، عذاب کي تاريکي کے بجائے وہاں اب مغفرت کا نور ہے۔
آپ کو تعجب ہوا اللہ تعالي سے اس مسئلہ کا حل کرنے کي دعا کي تو اللہ تعالي نے ان کي طرف وحي بھیجي کہ يہ بندہ گنہگار تھا، جس کي وجہ سے عذاب ميں مبتلا تھا، اس کا بچہ مکتب ميں داخل کرديا گيا، استاد نے اسے پہلے دن
بسم اللہ الرحمان الرحيم
پڑھائي تب مجھے اپنے بندے سے حيا آئي کہ ميں زمين کے اندر اسے عذاب ديتا ہوں جبکہ اسکا بيٹا زمين کے اوپر مير انام ليتا ہے۔

Advertisements

About NimdA

nothing

Posted on September 8, 2012, in اقتباس کولیکشن. Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: