Faqeer: Talash az Mumtaz Mufti


ہماری گلی میں ایک فقیر آتا ہے ۔ وہ صدا دیتا ہے ۔ ہر چند منٹ کے بعد اسکی صدا ساری گلی میں گونجتی ہے

“ میری باری کیوں دیر اتنی کری“

اسکی صدا سنکر مجھے غصہ آتا ہے ۔ میر ے اندر کی بھٹیارن چڑ چڑ دانے بھونتی ہے۔ ایک روز میرے صبر کا پیمانہ لبریز ہو گیا ۔ میں نے دوڑ کر فقیر کو پکڑ لیا ۔

“ یہ تو کیا کر رہا ہے بابے ؟ “ میں نے غصے سے پوچھا
“صدا دے رہا ہوں بابو جی ! “ وہ بولا
“کیا مطلب ہے تیرا اس صدا س
ے ؟ “ میں نے اسے ڈانٹا
“ میں منگتا ہوں ۔ مانگ رہا ہوں “ وہ بولا
“ کیا ایسے مانگا کرتے ہیں ۔ احمق پہلے مانگنا سیکھ ۔ جو مانگنا ہے منت کر کے مانگ ، ترلے کر ، سیس نوا ، دینے والے کا ادب کر ، احترام کر ۔ تُو تو اسکے خلاف شکایت کر رہا ہے ‘میری بار کیوں دیر اتنی کری ‘ بے وقوف دینے والے کی مرضی ہے چاہے جلدی دے چاہے دیر سے دے ، چاہے کم دے چاہے زیادہ دے ، چاہے دے چاہے نہ دے “

فقیر بولا “ جا بابو جی ! اپنا کام کر ہمارے معاملے میں دخل نہ دے ، مانگنے والا جانے اور دینے والا جانے تُو ماما لگتا ہے ۔ میں نے ساری زندگی یہی صدا دی ہے ۔اس نے کبھی ٹوکا نہیں مجھے ، کبھی غصہ نہیں کیا ۔ الٹا وہ مجھے دیتا رہا ہے ، دیتا رہا ہے

(تلاش از ممتاز مفتی)

Advertisements

About NimdA

nothing

Posted on November 3, 2012, in اقتباس کولیکشن. Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: