مرے ہرکاب ہیں وحشتیں، میری و حشتوں کو قرار دے


مرے ہرکاب ہیں وحشتیں، میری و حشتوں کو قرار دے
مجھے مہر وماہ سے غرض کیا، مجھے بھیک میں میرا یار دے
کئی دن سے دل یہ دکھا نہیں، کوئی شعر میں نے کہا نہیں
مرے حال پہ بھی نگاہ کر، کسی کیفیت سے گزار دے
میں ہزار بجھتا دیا رہوں، سر دشت میں بھی جلا رہوں
مری شاخ غم کو نہال کر، نئی کونپلوں کو بہار دے
کئی دن سے کوچہ ذات میں کسی دشت غم کا پڑاؤ نہیں
کوئی شام مجھ میں قیام کر مرے رنگ روپ کو نکھار دے
میں شکست ذات کی حد میں ہوں، کسی سرد رات کی ذد میں ہوں
مجھے امتحاں سے گزار دے، کوئی مہر مجھ میں اتار دے
تیری راہ گزر میں ہوں خیمہ ذن، ہے بدن پہ ہجر کا پیر ہن
جو گزر گئی سو گزر گئی میری باقی عمر سنوار دے
جہاں عرش و فرش ہیں باادب، اسی در پہ جا کہ سوال کر
وہی نور بخشے ہے خاک کو، وہی آئینے کو غبار دے

اردو شاعری – Urdu Shayari

Advertisements

About NimdA

nothing

Posted on April 22, 2015, in اقتباس کولیکشن. Bookmark the permalink. Leave a comment.

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s

%d bloggers like this: